Jaag Kashmir online news from Dadyal, Dudyal, Mirpur and Azad Kashmir
Jaag Kashmir online news from Dadyal, Dudyal, Mirpur and Azad Kashmir Sat, 25 Feb 2017

فون پر صرف uc browser میں کھولیں

Use UC Browser to open on mobile.

News from Dadyal, Mirpur and all Azad Kashmirاستاد حافظ محمد شفیع (مرحوم )کی زندگی پر ایک نظر :حافظ محمد صدیق ساقی

وقاص چوہدری نے یہ خبر 2016-11-04 کو am10:42 پرcol کی کیٹیگری میں پوسٹ کی اور ابھی تک اس کو 175 قارئین نے پڑھا ہے۔
 

Jaagkashmir.com urdu news dadyal mirpur azad kashmir

(جاگ کشمیر نیوزwww.jaagkashmir.com)

                      ( اُستاذحافظ محمد شفیع (مرحوم) کی زندگی پر ایک نظر)

                                           تحریر۔  حافظ محمدصدیق ساقی

انسان کے پاس زندگی ایک امانت ہے اور وقتِ مُقررہ پر ہر  انسان نے موت کا ذائقہ چھکنا ہے ۔ قرآنِ مجید نے انسان کا   

  مقصدِحیات اللہ تعالیٰ کی بندگی بتایا ہے۔خوش نصیب ہیں وہ لوگ جن کی زندگی بندگی خدا،مُحبت مُصطفے صلی اللہ علیہ وسلم اور ادبِ شیخ میں   

  گزرتی ہے۔اس تحریر میں پیکرِا خلاص و وفاء ،عالم ِدین، حافظِ قُرآن ،ایک مُشفق اور مہربان مدرس ، اُستاذ حافظ محمد شفیع (مرحوم)   

  کاتذکرہ ہو گا ۔اُستاذ حافظ محمد شفیع (مرحوم)آزاد کشمیر کے  ضلع کوٹلی کی تحصیل سہنسہ کے گائوں حافظ آباد ڈونگی سنہوٹ میں چوہدری منگو خان کے گھر پیدا ہوئے  آپ چار بھائی تھے  حاجی محمد زمان ،حافظ محمد شفیع ، حافظ محمد شریف اور محمد عنایت یاد  رہے کے محمد عنایت تیرہ سال کی عمر میں وفات پا گے تھے دو بھائی حاجی محمد زمان اور حا فظ محمد شریف بقیدِ حیات ہیں ، اُستاذ محمد شفیع صاحب کی عمر جب دس برس ہوئی تو آپ کے والدِ گرامی کا انتقال ہو گیا  آج سے ساٹھ سال پہلے کے حالات پر نظر ڈالی جائے تومعلوم  ہوتا ہے کہ اُس وقت آزاد کشمیر  میں تعلیمی ادارے نہ ہونے کے برابر تھے، جہالت  اور پسماندگی کا دور دورہ تھا ۔لیکن جہالت کے گھٹا ٹوپ اندھیروںمیں ایک علم کی شمع روشن ہوئی ، کوٹلی (آزاد کشمیر ) میں علم اور تصوّف کا ایک آفتاب طلوع ہوا اور طالبانِ علم و معرفت اُس آفتاب کی ضیاء پا شیوں سے منور ہونے کے لیے کشاں کشاں گُلھار شریف کی طرف آنے لگے۔ طالبان ِ علم و معرفت ، اور قافلئہ عشق ومستی میں ہمیں ایک بچہ دیکھائی دیتا ہے ۔ اور وہی بچہ  جب حافظِ قرآن ، عالم ِ  دین ،  خطیب اور مدرس بنتا ھے تو  زمانہ اُسے پیکرِ اخلاص و وفاء اُستاذ محمد شفیع  کے نام سے  پکارتا  اور جانتا ہے۔ اُستاذ محمد شفیع صاحب  اپنے شیخ کی مُحبت میں کُندن بن چکے تھے ۔ آپ نے اپنے شیخ طریقت حضورخواجہ عالم قبلہ حضرت صاحب رحمةاللہ علیہ کی ہدایت کے مُطابق اپنے تعلیمی سفر کا آغاز درس شریف گُلھار سے کیا ،  آپ کے اوّلین اُساتذہ کرام میں مولاناعبدالعزیز (مرحوم) منڈی کوٹلی اور اُستاذ مو لا نا ولی داد (مرحوم )  گُلھار شریف شامل ہیں۔بعد ازان بحکمِ شیخ آپ خا نقا ہ سُلطانیہ شریف جہلم (پاکستان )  مُنتقل ہوئے  وہاںاُستاذ محمد حسن رحمتہ اللہ علیہ  رجور والوں سے حفظِ قرآن مجید مکمل کیا۔آپ نے د ینی کُتب فیصل آباد میں خواجہ عالم قبلہ حضرت  صاحب رحمةاللہ علیہ کے خلیفہ مجاز حضرت مو لا نا مُفتی محمد امین صاحب مدظلہ العالی کے بھائی مولانا محمد حنیف صاحب رحمةاللہ علیہ کے پاس پڑھیں ، کُتب کی تکمیل کے بعد آپ بحکم شیخ  جامع مسجد شریف سنٹر جیل فیصل آباد  میںگیارہ سال تک دینی خدمات سر انجام دیتے رھے ۔پھر بحکم حضرت خواجہ عالم قبلہ حضرت صاحب رحمةاللہ علیہ آپ صمدیہ مسجد کوٹلی ،  جامع مسجد شریف سمروڑ ، جا مع مسجد شریف ترئیا ں با زار جامع مسجد شریف  لال کوٹلی ، جامعہ زاہدیہ سلطانیہ بونگہ حیات ساہیوال، جامع مسجد اللہ والی راولاکوٹ ،جامع مسجد شریف گل پور بازاراورجامع مسجد شریف  پوٹھہ ڈڈیال  میں بطور امام وخطیب مدرس  ذمہ داریاں ادا کرتے رہے ، آپ کی شخصےّت میں عاجزی اور انکساری کا پہلونمایاں تھا ، آپ ایک شفیق اور مہر بان اُستاذ تھے، طلباء کے سا تھ انتہائی مشفقانہ  انداز میں پیش آتے تھے ، آپ عام لو گو ںسے بھی بڑے پیارومُحبت  کابرتائو کرتے تھے، آپ کامُسکراتا ہواچہرہ ہر ایک کو پیارومحبت کا پیغا م دیا کرتا تھا ،آپ نے اپنے بچوں کی بڑے احسن طریقہ سے تعلیم و تربیت کا اہتمام کیا ، آپ کے بچوں کے نام بمع تعلیمی قابلیت  درج ذیل ہیں ۔ حافظ محمد ادریس  ایم اے عربی فاضل بھیرہ شریف ،حافظ محمد حفیظ ایم اے  انگلش اسلامی یونیورسٹی  اسلام آباد فاضل بھیرہ شریف، حافظ محمد امین  ایم اے درس نظامی فاضل بھیرہ  شریف، حافظ محمد آصف مڈل پاس اپنے گائوں کی مسجد میں  بطور امام ڈیوٹی سرا نجام دے رہے ہیں ،اور آپ کے دو بیٹے  حافظ محمد سعید  اور حافظ محمد شعیب بالترتیب گلزار حبیب میر پور اور درس شریف انب ڈڈیال میں زیرِ تعلیم ہیں ۔آپ کی دو بیٹیاںہیں اور دونوں شادی شدہ ہیں ، چھوٹی بیٹی نے درس نظامی اور ایف اے تک تعلیم حاصل کی ہوئی ہے

 

  اُستاذ محمد شفیع (مرحوم) کاسفرِ آخرت 

  آپ نے ساٹھ سال قبل جس مقدس مقام  جامع الفردوس گُلھار شریف سے اپنے علمی سفرکا آغاز کیا تھا،زندگی کے ستر سال گزارنے کے

 بعد اُسی مقدس مقام جامع الفردوس گُلھار شریف میں آخری وقت آ جاتا ہے۔ 22اور 23 ستمبر2016 جمعرات اور جمعةالمبارک کی 

 درمیانی شب آپ نمازعشاء کی ادائیگی کے بعد جامع الفردوس اشریف کے پُرنور ما حول میں با وازِ بُلند سورةالملک کی تلاوت کی 

سعادت حاصل کرتے ہیں ، بعد ازاں درس گاہ گلھار شریف میں مُنعقدہ محفلِ ذکرو  دُرود  میں شرکت اور اختتامی دُعا کرنے کے بعد آپ سونے کے لیے درسگاہ گُلھار شریف کے کمرہ میں چلے جاتے ہیں اور رات کے کسی پہر داعیِ اجل کو لبّیک کہہ جاتے ہیںدوسرے دن جامع الفردوس گُلھارشریف میں بعد نماز جمعةالمُبارک آپ  کی نماز جنازہ ادا کی گئی ، جس میں علماء ،حُفاظ ،وکلاء ،تاجران ،سیاسی وسماجی شخصیات سمیت  ہزاروں لوگوں نے شرکت کی، نماز جنازہ کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے تحصیل قاضی ڈڈیال، قاضی محمد رفیق صاحب نے آپ کی دینی خدمات، سلسلہ شریفہ سے وابستگی، اخلاص و وفاء کا تذکرہ کرتے ہوئے مرحوم کو  زبردست خراج تحسین پیش کیا ،نماز جنازہ کی امامت شیخِ طریقت، عالم ربانی  ابو امامہ حافظ محمد زاہد البکری الصّدیقی حفظہ اللہ تعالیٰ نے فرمائی بعد ازاں آپ کی تدفین آبائی گائوں حافظ آباد ڈونگی سنہوٹ میں کی گئی آپ کی تدفین میں شیخ طریقت کی بنفسِ نفیس شرکت اُستاذحافظ محمد شفیع (مرحوم ) کے لیے بہت بڑا اعزاز اور سعادت ہے۔ آپ کی وفات پر شیخِ طریقت کے یہ الفاظ آپ اور آپ کی فیملی کے لیے بڑا اعزاز ہیں  ''  مُحبت و وفاء کا ایک اور چراغ بُجھ گیا  ''  میری دُعا ہے اللہ تعالی اُن کی مغفرت فرمائے اور انہیں جنت ا لفردوس  میں اعلی مُقام عطا فرمائے   (آمین ثم آمین)  

        

  ترتیب و پیشکش ،، حافظ محمد صدیق ساقی ساکن پڑاٹاں سہر منڈی تحصیل سہنسہ ضلع کوٹلی آزاد کشمیر

 

اگلی خبر پڑہیں پچھلی خبر پڑہیں

ایک ماہ کی مقبول ترین